islamic-sources

  1. home

  2. article

  3. قصہ یوسف زلیخا ورقه 64

قصہ یوسف زلیخا ورقه 64

قصہ یوسف زلیخا ورقه 64
Rate this post

لکهاری:مولوی غلام رسول عالمپوری

ورقہ 64

بعض رنگاں پر مر مر جاویں بعض تکیں وٹ کھاویں
بعض منے تے بعضیوں مُنکر منصف کیویں سداویں
میٹ اکھیں ایہہ ظاہر والیاں گُزر گئیاں انصافوں
باطن والیاں کھول اکھیں نوں ملے نجات خلافوں
ہو طالب وچ طلبے صادق جے من چاؤ ودھیرے
جس حُسنے دِل مُٹھا تیرا انت ملے وچ تیرے
جے وچ وہم ڈُبیں کیہ پاویں مفت نہ کر دِل بیرے
توں حُسنے دی طالب آیوں حُسن نہیں وس میرے
چھوڑ مینوں لبھ صاحب میرا اوہا صاحب تیرا
تیرا میرا دم دا لیکھا کائی روز وسیرا
وائے دریغ گھٹے غم اُسدا جوشے کدی کدائیں
لبھ نہیں جبیں حال تغیّر کدی ہووے کدی ناہیں
میں محتاج کھڑا در جس دے وتس بوند جمالوں
اِک قطرے ول ویکھ نہ رُجھیں اوگت جاویں حالوں
دھر ول نظر غنی دے دردے پاویں لکھ خزانے
اس تھیں منگ ملن خیراتاں ہوراں مالنہ خانے
جے تُوں چاہیں غموں آزادی آس ملے درگاہوں
جے تُوں چاہیں ہر دم خوشیاں بھُل نہیں اس راہوں
جے تُوں چاہیں عشق ہُلارے ودھ ملن اُمیدوں
جے تُوں چاہیں زوق مدامی دیکھ نہ عمروں زیدوں
جے تُوں چاہیں وصل زیارت اِک دم رہیں نہ خالی
جے تُوں ڈریں وچھوڑے کولوں نہ جا دور سوالی
جے تُوں چاہیں میں سُکھ پاواں چھڈدے دُنیا ساری
جے تُوں چاہیں فکر ہزاراں چاہ خودوں بے زاری
جے تُوں چاہیں ملے حیاتی زندی گُزر جہانوں
جے تُوں چاہیں ملے تسلی ہٹ جا وہم گمانوں
جے تُوں یار پیارے خاطر ہر شے تھیں چھُٹ جاویں
جو چاہیں تُوں سبھ کجھ پاویں تھاؤں کُھتھا مُڑ پاویں
جو چاہیں سو ملے اِتھائیں ایہہ در چھوڑ نہ جائیں
جے ایہہ چھوڑ چلیں کد کدھرے خیر ملے تُدھ تائیں
جس تھیں خبر نہ رکھیں اِک دم اوہ دم غافل ناہیں
اوہی اِک ہوندا جے غافل ہوندیوں نہ کداہیں
پلیں جیہدے وچ ناز احسانوں اس تھیں خبر نپاویں
جے خود وانگ ملے کا صورت دیکھ جھڑیں غش کھاویں
پھر مُڑ ویکھ جو سبھ کجھ اُس دا نہ کجھ تیرا میرا
کِت ول نسبت کریں پُکاریں تیرا حُسن گھنیرا